• عزاداری مذہبی و شہری آزادیوں کا مسئلہ، قدغن قبول نہیں، علامہ شبیر میثمی
  • قائد ملت جعفریہ علامہ ساجد نقو ی کی ا پیل پر بھارت میں توہین آمیز ریمارکس پر ملک گیر احتجاج
  • قائد ملت جعفریہ پاکستان کی مختلف شخصیات سے ان کے لواحقین کے انتقال پر تعزیت
  • اسلامی تحریک پاکستان کا گلگت بلتستان حکومت میں شامل ہونے کا فیصلہ
  • علماء شیعہ پاکستان کے وفدکی وفاقی وزیر تعلیم سے ملاقات نصاب تعلیم پر گفتگو مسائل حل کئے جائیں
  • بلدیاتی انتخابات سندھ: اسلامی تحریک پاکستان کے امیدوار بلامقابلہ کامیاب
  • یاسین ملک کو دی جانے والی سزا ظلم پر مبنی ہے علامہ شبیر حسن میثمی شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • ملی یکجہتی کونسل اجلاس علامہ شبیر میثمی نے اہم نکات کی جانب متوجہ کیا
  • کراچی میں دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان صوبہ سندھ
  • اسلامی تحریک پاکستان کا اعلی سطحی وفد گلگت بلتستان کے دورے پر اسکردو پہنچے گا

تازه خبریں

شیعہ علماءکونسل کا15 دسمبر یوم جمعہ کو ملک گیر احتجاج کا اعلان

 قبلہ اوّل کی حفاظت کیلئے کسی قربانی سے بھی دریغ نہیں کرینگے ، عارف واحدی
شیعہ علماءکونسل کا15 دسمبر یوم جمعہ کو ملک گیر احتجاج کا اعلان،بیت المقدس کا معاملہ سیاسی نہیں بلکہ یہ عالم اسلام کا مسئلہ ہے
بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کرنے کے نتائج بہت خطرناک ثابت ہونگے۔ مرکزی سیکرٹری جنرل شیعہ علماءکونسل

راولپنڈی /اسلام آباد13 دسمبر 2017 ء(        ) شیعہ علماءکونسل پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ عارف حسین واحدی نے کہاہے کہ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کی ہدایت پر بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت قرار دینے کے خلاف 15 دسمبر یوم جمعہ کو ملک گیر احتجاج کا اعلان کردیاگیا ہے اور ہم قبلہ اول کی حفاظت کے لئے کسی قربانی سے بھی دریغ نہیں کریں گے۔ امریکی صدر کا بیت المقدس کو اسرائیلی دارالخلافہ قرار دینا اور سفارتخانہ منتقل کرنے کا اعلان احمقانہ اقدام ہے، امت مسلمہ کو متحد ہوکر استعماری، صیہونی اور شیطانی قوتوں کا مقابلہ کرنا ہوگا، امریکی منافقانہ اور دہرا کردار کھل کر سامنے آگیاہے، مسلم حکمران بھی خواب غفلت سے جاگیں، او آئی سی کو بھی اب متحرک کر دار ادا کرنا ہوگا،اسلامی ممالک اتحاد کی ترجیحات بھی واضح کرنا ہونگی۔شیعہ علماءکونسل پاکستان کے سیکرٹری جنرل علامہ عارف حسین واحدی نے بیت المقدس کو اسرائیلی سفارتخانہ تسلیم کرنے پر امریکی اقدام کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہاکہ ڈونلڈ ٹرمپ کا بیت المقدس کو اسرائیل کادارالخلافہ تسلیم کرنا اور وہاں اپنا سفارتخانہ منتقل کرنے کا اعلان انتہائی احمقانہ اقدام ہے۔ انہوںنے کہاکہ بیت المقدس کا معاملہ سیاسی نہیں بلکہ یہ عالم اسلام کے مسلمانوں کے ایمان کا مسئلہ ہے۔ ایک طرف امریکہ انسانی حقوق کا ڈھنڈورا پیٹتاہے اور دوسری جانب مظلوم فلسطینیوں پر ظلم کے پہاڑ توڑنے والے دہشت گرد ملک اسرائیل کی پشت پناہی کررہاہے جس سے اس کا دوہر ا معیار اور منافقانہ کردار کھل کر سامنے آگیاہے۔ انہوںنے کہاکہ امت مسلمہ اس وقت انتہائی مشکل حالات میں ہے کابل سے دمشق اور بغداد سے صنعاءتک ، فلسطین سے کشمیر تک پورا عالم اسلام جل رہاہے لیکن افسوس مسلم حکمران خواب غفلت میں پڑے ہوئے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ امریکہ کا یہ اقدام مسلمانوں کے باہمی انتشار کے باعث ممکن ہواہے۔ انہوںنے زور دیتے ہوئے کہاکہ اسلامی دنیا کو اپنی صفوں میں اتحاد قائم کرکے اس فیصلے کے خلاف کھڑا ہونا ہوگا۔ انہوںنے مطالبہ کیاکہ اسلامی دنیا کی نمائندہ تنظیم او آئی سی کو اس موقع پر جرات مندانہ موقف اختیار کرنا ہوگا جبکہ عرب لیگ بھی اس سلسلے میں موثراقدامات اٹھائے۔ انہوںنے کہاکہ اگر مسلم ممالک متحدہوگئے تو پھر کوئی طاقت انہیں زیر نہیں کرسکتی اس لئے ہمیں اتحاد کے ساتھ ان استعماری، صیہونی اور شیطانی قوتوں کا مقابلہ کرنا ہوگا اس صورتحال میںعوام کا سوال بجا ہے کہ اسلامی ممالک کا اتحاد اس اعلان کے رد عمل میں کیا کردار ادا کر رہا ہے۔​