قائد اعظمؒ کی قیادت میں مسلمانوں نے ایک علیحدہ وطن حاصل کیا ،قائد ملت جعفریہ علامہ ساجد نقوی
 قائد اعظمؒ کی قیادت میں مسلمانوں نے ایک علیحدہ وطن حاصل کیا ،قائد ملت جعفریہ علامہ ساجد نقوی

 قائد اعظمؒ کی قیادت میں مسلمانوں نے ایک علیحدہ وطن حاصل کیا ، علامہ ساجد نقوی
پاکستان کو ترقی یافتہ ممالک کی صفوں میں لانے کےلئے انقلابی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے ، قائد ملت جعفریہ
قومی اداروں کو سیاست سے بالا تر ہو کر ملک کی سا لمیت ، بقا اور ترقی کےلئے اپنا مثبت کردار ادا کرنا ہوگا۔

راولپنڈی / اسلام آباد11ستمبر 2019 ء (   جعفریہ پریس  )قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کا کہنا ہے کہ بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح ؒ ایک عظیم لیڈر تھے جنہوںنے پُر جوش عوامی جدوجہد کے ذریعہ ایک آزاد خود مختار مملکت کے قیام کو پایہ تکمیل تک پہنچایا ۔ اس ملک کی سا لمیت اور بقا کےلئے ملک کے تمام طبقات کے ساتھ ساتھ حکمران طبقہ پر بھاری ذمہ داری عائد ہو تی ہے کہ قائد اعظم کے افکار پر عمل پیرا ہوتے ہوئے پاکستان کو ترقی یافتہ ممالک کی صفوں میں لانے کےلئے انقلابی اقدامات اٹھائیں۔علامہ ساجد نقوی نے بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح ؒ کے 71ویں یوم دفات کے موقع پر خیا لات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ قائد اعظم محمد علی جناح کی قیادت میں مسلمانوں نے ایک علیحدہ وطن حاصل کیا ،لیکن وطن عزیز کا المیہ یہ رہاہے کہ یہاں طبقاتی تفاوت ، عدم مساوات ، عدل و انصاف کا فقدان چلا آرہاہے ۔جس کا بنیادی سبب یہ ہے کہ حکمران طبقوں نے جونظام رائج اور متعارف کرایا اس نظام میں عوام کی حالت زار کو بہتر بنانے سے زیادہ ان کے اپنے مفادات کا حصول اور رتحفظ جیسے مقاصد کار فرما رہے جس پر نظر ثانی کی ضرورت ہے ۔انہوں نے مزید کہاکہ تمام قومی اداروں کو سیاست سے بالا تر ہو کر ملک کی سا لمیت ، بقا اور ترقی کےلئے اپنا مثبت کر دار ادا کر نا ہوگالیکن اتنے برس گذر نے کے باوجود یہی مشاہدہ سامنے آیا ہے کہ عوامی طبقات نے تو خاطر خواہ اپنی ذمہ داریاں ادا کی ہیں اور غربت ، افلاس ، تنگدستی اور دیگر مسائل کو مشکلات کر برداشت کرتے ہوئے وطن عزیز کی سالمیت کے تحفظ کےلئے قربانیاں دیں لیکن حکمران طبقے نے اپنی ذمہ داریاں دیانت داری سے ادا کرنے میں تساہل سے کام لیا ۔علامہ ساجد نقوی نے کہا کہ قائد عظم محمد علی جناح ؒ کے پاکستان کو داخلی طورپر مضبوط ، مستحکم اور خوشحال بنانے کےلئے لازم ہے کہ حکمران طبقات اچھے بڑوں کی تمیز میںفرق رکھیں تاکہ معاشرے سے بگاڑ اور انتشار و انارکی کا خاتمہ ہو سکے ، ظالم و مظلوم ، قاتل و مقتول ، دہشتگرد و امن پسندوںمیں فرق کئے بغیر تواز ن کی ظالمانہ پالیسیوں پر عمل پیرا ہو کر کبھی بھی ملکی سلامتی اورقومی خدمت کا خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہوسکتا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here