• قائد ملت جعفریہ علامہ ساجد نقو ی کی ا پیل پر بھارت میں توہین آمیز ریمارکس پر ملک گیر احتجاج
  • قائد ملت جعفریہ پاکستان کی مختلف شخصیات سے ان کے لواحقین کے انتقال پر تعزیت
  • اسلامی تحریک پاکستان کا گلگت بلتستان حکومت میں شامل ہونے کا فیصلہ
  • علماء شیعہ پاکستان کے وفدکی وفاقی وزیر تعلیم سے ملاقات نصاب تعلیم پر گفتگو مسائل حل کئے جائیں
  • بلدیاتی انتخابات سندھ: اسلامی تحریک پاکستان کے امیدوار بلامقابلہ کامیاب
  • یاسین ملک کو دی جانے والی سزا ظلم پر مبنی ہے علامہ شبیر حسن میثمی شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • ملی یکجہتی کونسل اجلاس علامہ شبیر میثمی نے اہم نکات کی جانب متوجہ کیا
  • کراچی میں دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان صوبہ سندھ
  • اسلامی تحریک پاکستان کا اعلی سطحی وفد گلگت بلتستان کے دورے پر اسکردو پہنچے گا
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان ۸ شوال یوم جنت البقیع کے عنوان سے منائے گی

تازه خبریں

قائد اعظم کے افکار و تعلیمات پر عمل پیرا ہوکرمستقبل کو محفوظ بنایا جاسکتاہےقائد ملت علامہ ساجد نقوی

قائد اعظم کے افکار و تعلیمات پر عمل پیرا ہوکرمستقبل کو محفوظ بنایا جاسکتاہےقائد ملت علامہ ساجد نقوی

قائد اعظم کے افکار و تعلیمات پر عمل پیرا ہوکرمستقبل کو محفوظ بنایا جاسکتاہےقائد ملت علامہ ساجد نقوی

ملک کی تشکیل میں تمام مکاتب و مسالک سمیت مسیحی برادری نے بھی بانی پاکستان کی اس جدوجہد میں بھرپور ساتھ دیا،کرسمس کے تہوار پر تمام مسیحی برادری کو مبارک باد پیش کرتے ہیں اور اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ ہم سب کی ذمہ داری ہے،پیغام
 اسلام آباد 24 دسمبر 2018 ء(   )قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کہتے ہیں قائد اعظم کے افکار و تعلیمات پر عمل پیرا ہوکر ہی مستقل کو محفوظ بنایا جاسکتاہے، ملکی تشکیل میں تمام مکاتب و مسالک سمیت مسیحی برادری نے بھی بھرپور کردار ادکیا، قائد کے پاکستان میں بنیادی حقوق کی فراہمی اولین ترجیح ہونا چاہیے، افسوس یہاں ایک طرف اساتذہ اور صحافیوں کو ہتھکڑیاں لگیں تو دوسری جانب بنیادی شہری حقوق بھی پامال کردیئے گئے، فلاحی مدنی ریاست کے قیام کےلئے ضروری ہے کہ صحیح معنوں میں انصاف کی فراہمی یقینی بنائی جائے، طبقاتی و پسند و ناپسند کی تفریق ختم کرکے آئین کی بالادستی اور قانون کی حکمرانی کےلئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں۔
    ان خیالات کا اظہار انہوںنے بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے یوم ولادت پر قوم کے نام اپنے پیغام میں کیا، انکا کہنا تھا کہ قائد اعظم ؒ کے افکار و تعلیمات پر عمل پیرا ہوکرہم اپنے مستقبل کو محفوظ بناسکتے ہیں، جس آزاد اور خود مختار مملکت کے قیام کی جدوجہد کو بانی پاکستان نے پایہ تکمیل تک پہنچایا اس کی سا لمیت اور بقا کے لئے ملک کے تمام طبقات کے ساتھ ساتھ حکمران طبقہ پر بھی بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ پاکستان کو ترقی و خوشحالی کی راہ پر گامزن کرنے کے لئے اپنا مثبت کردار ادا کرے۔ 7دہائیوں سے زائد عرصہ گزرنے کے باوجود یہی مشاہدہ سامنے آیا ہے کہ عوامی طبقات نے تو خاطر خواہ اپنی ذمہ داریاں ادا کی ہیں لیکن افسوس صد افسوس جس پاکستان کا خواب شاعر مشرق نے دیکھا اور جس کی تعبیر بابائے قوم نے چاہی آج اسی پاکستان نے پروفیسرمحمد جاوید کی میت کو بھی ہتھکڑی لگی دیکھی اور مشہور صحافی شاہد مسعود بھی ہتھکڑیوں میں جکڑے عدالت پہنچے، اسی ملک میں بنیادی شہری آزادیوں پر نہ صرف قدغنیں لگیں بلکہ چار دیواری کے اندر بھی محفوظ ہونے کی بجائے اور اپنا حق مانگنے کی پاداش میں ایف آئی آرز کاٹ دی گئیں، جبر، دھونس دھاندلی، تذلیل و تضحیک ، توہین مذہب و مسلک اور پامالی تقدس و چادر و چار دیواری حتیٰ کہ بچوں ، بزرگوں اور خواتین پر بھی عوام کا تحفظ کرنے کے نام لیواﺅں نے ستم گری کی انتہاءکی، بے یارومددگار مسافروں کو نہ صرف لوٹاگیا بلکہ شناختی پریڈ کرکے ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ بھی جاری رہا اس سب کے باوجود عوام نے غربت‘ افلاس‘ تنگدستی اور دیگر مسائل و مشکلات کو نہ صرف برداشت کیا بلکہ وطن عزیز کی سلامتی و تحفظ کے لئے قربانیوں کا سلسلہ تاحال جاری ہے اس نازک مرحلے میں حکمرانوں اور ذمہ داران کو نہ صرف سنجیدگی سے غور کرنا ہوگا بلکہ اپنی ذمہ داریاں بھی پوری دیانت داری سے ادا کرنا ہونگی ۔
    علامہ ساجد نقوی نے 25 دسمبر کرسمس کے تہوار کے موقع پر تمام مسیحی برادری کو مبارک باد پیش کرتے ہوئے کہا کہ بحیثیت پاکستانی اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ملک کی ان اقلیتوں کو کسی بھی مرحلے پر عدم تحفظ یا امتیاز ی سلوک کا احساس نہ ہونے دیا جائے اور ہر حال میں ان کے حقوق کا تحفظ کیا جائے۔ یہ بات مشاہدے میں آئی ہے کہ عرصہ دراز سے طبقاتی تفاوت‘ عدم مساوات‘ عدل و انصاف کا فقدان چلا آرہا ہے جس کا بنیادی سبب حکمران طبقات کی غیر سنجیدہ اقدامات سمیت اپنے فرائض منصبی کو احسن طور پر انجام نہ دینا ہے جس پر نظرثانی کی ضرورت ہے۔آخر میں علامہ ساجد نقوی کا کہنا تھا کہ قائد اعظم محمد علی جناح کے پاکستان کو داخلی طور پر مضبوط‘ مستحکم اور خوشحال بنانے کے لئے لازم ہے کہ حکمران طبقات اچھے اور بروں کی تمیز کو یقینی بنائیں تاکہ معاشرے سے بگاڑ‘ انتشار اور انارکی کا خاتمہ ہوسکے ۔ظالم و مظلوم ‘ قاتل و مقتول‘ دہشت گرد و امن پسندوں میں فرق کئے بغیر توازن کی ظالمانہ پالیسیوں پر عمل پیرا رہ کر کبھی بھی ملکی سلامتی اور قومی وحدت کا خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہوسکتا۔