نئی دہلی : بھارتی ہائی کورٹ نے آدرش ہاؤسنگ اسکینڈل میں دو سابق بھارتی آرمی چیفس، بحریہ کے سابق سربراہ، تین لیفٹیننٹ جنرلز اور چار میجر جنرلز سمیت اعلیٰ فوجی افسران کو مقدمے میں نامزد کردیا۔

ممبئی کے عین بیچوں بیچ پوش علاقے میں قائم 31 منزلہ عمارت جس کو صرف کارگل جنگ میں ہلاک ہونے والے بھارتی فوجیوں کے اہل خانہ کیلئے مخصت کیا گیا تھا، حاضر سروس بھارتی فوجیوں، سیاست دانوں اور بیورو کریٹس نے اس پر قبضہ کرلیا۔ قبضے کے خلاف ہلاک فوجیوں کے اہل خانہ ممبئی ہائی کورٹ سے رجوع کیا،جس پر عدالت نے مارے گئے فوجیوں کے اہل خانہ کے حق میں فیصلہ دے دیا۔

بھارتی ذرائع ابلاغ میں جاری ہونے والی اطلاعات کے مطابق کارگل جنگ میں مارنے جانے والے بھارتی جوانوں کی بیواؤں کیلئے مختص پلاٹ پر ممبئی ہائی کورٹ کے حکم پر قائم انکوائری کمیٹی نے آدرش ہاؤسنگ اسکینڈل میں دو سابق بھارتی آرمی چیفس کے علاوہ بحریہ کے سابق سربراہ ،3لیفٹیننٹ جنرلز اور 4میجر جنرلز سمیت اعلیٰ فوجی افسران کو نامزد کردیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here