پشاور ( ) شیعہ علماء کونسل خیبر پختونخوا کے زیر اہتمام ایک احتجاجی مظاہرہ باعنوان” ختم نبوتﷺ قانون کے حوالے سے قومی اسمبلی میں ترمیم اور شیعہ ٹارگٹ کلنگ کو ئٹہ کی مذمت اور لاپتہ شیعہ مسلمانوں کے حق میں مظاہرہ” پشاور پریس کلب کے سامنے کیا گیا جس کی قیاد ت شیعہ علماء کونسل خیبر پختونخوا کے صوبائی جنرل سیکرٹری آخونزادہ مظفر علی نے کی۔اس موقع پر کارکنوں کی کثیر تعداد موجود تھی۔ صوبائی جنرل سیکرٹری نے قومی اسمبلی ختم نبوت قانون میں ترمیم اور اس حوالے سے حکومتی نمائندوں کے منتازعہ بیانات کی پرزور مذمت کی۔انھوں اس موقع پر کہا کہ ناموس رسالت ﷺپر ہماری جان بھی قربان ہے اور کسی شخص یا حکومت کو یہ حق نہیں پہنچتا کہ وہ اس کے موجودہ قانون میں اپنے مفادات اور سیاسی سکورنگ کے لئے کسی بھی قسم کی ترمیم کرے۔ اسی طرح پاکستان بھر اور خصوصاََ کوئٹہ میں شیعہ مسلمانوں کی ٹارگٹ کلنگ کی پر زور مذمت کرتے ہوئے اسے صوبائی حکومت اور سیکورٹی اداروں کی ناکامی قرار دیا۔ انھوں نے پاکستان بھر میں شیعہ لاپتہ افراد جن میں نوجوانوں کی اکثریت شامل ہے، کی گمشدگی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ لا پتہ افراد کو سامنے لایا جائے۔ اگر انھوں نے کوئی جرم سر زرد کیا ہے تو انھیں چالان سمیت عدالتوں میں پیش کیا جائے مگر یہ نا ممکن ہے کہ ہمارے نوجوان لاپتہ ہیں بغیر کسی وجہ بتائے۔ ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ لاپتہ افراد کو سامنے لایا جائے اور انکے گھروں اور خانوادوں میں پائی جانے والی بے چینی کو دور کیا جائے۔ اس موقع پر شیعہ علماء کونسل ضلع پشاور اور جے ایس اوپشاور کے جوان بھی موجو د تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here