نائجیریا کی خبر رساں ایجنسی ونگارڈ کی رپورٹ کے مطابق اتوار کو نائجیریا کی پولیس نے کانو صوبے میں اربعین حسینی کے کاررواں پر حملہ کر کے دو زائرین کو شہید کر دیا۔
شہید ہونے والوں میں ایک خاتون اور اس ملک کے شیعہ مسلمانوں کے رہنما عبدالقادر سوناسی شامل ہیں۔
ایک عینی شاہد کے مطابق یہ حملہ زاریا شہر کے مشہور پل لادو میں ہوا۔
نائجیریا کی پولیس نے اربعین حسینی کے کاررواں کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس کا استعمال کیا اور فائرنگ کی جس میں عورتوں اور بچوں سمیت متعدد عزادار زخمی بھی ہوئے ہیں۔
واضح رہے کہ دسمبردو ہزار پندرہ میں بھی نائجیریا کی فوج نے زاریا شہر میں عزادروں پر حملہ کر دیا تھا جس کے نتیجے میں سیکڑوں عزادار شہید اور زخمی ہو گئے تھے۔
فوج نے نائجیریا کی اسلامی تحریک کے قائد شیخ ابراہیم زکزکی،ان کی اہلیہ اور بڑی تعداد میں شیعہ مسلمانوں کو گرفتار کر لیا تھا جو اب تک فوج کی قید میں ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here