آخر یہ عرب حکمران کس کام کے تحریر: ثقلین واحدی

حال ہی میں امریکی صدر ٹرمپ نے مشرق وسطی کے لیئے ایک نیا منصوبہ پیش کیا ہے جسے ڈیل آف سینچری کا نام دیا گیا اس میں صیہونی ریاست کو مکمل تحفظ فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ فلسطینی غیور قوم کے حقوق کی کمالِ ڈھٹائی کے ساتھ نفی کی گئی بلا شبہ امریکی صدر کے اس منصوبے کو تاریخ کا بدترین ڈھونگ قرار دیا جا سکتا ہے یہ منصوبہ مشرقِ وسطی میں امن کے قیام کے لیئے نہیں بلکہ صیہونی ریاست کے تحفظ کے لیئے تیار کیا گیا ہے اور غاصب اسرائیلی ریاست کو خطے کے دوسرے ممالک پر مسلط کرنے کی مذموم کوشش کی گئی جبکہ فلسطینی عوام کے آئینی و قانونی حقوق کو پامال کیا گیا یہ منصوبہ دراصل امریکی صدر کے یہودی داماد اور سعودی ولی عہد کے قریبی دوست جیرڈ کوشنر کا ہے جس نے تین سال کے عرصے میں یہ منصوبہ تیار کیا ہے یہ منصوبہ جو 181 صفحات پہ مشتمل ہے اس میں مغربی کنارے کے ساتھ ساتھ غربِ اردن کی وادی کو بھی اسرائیلی علاقے کے طور پر پیش کیا گیا ہے اور اہم بات یہ کہ امریکی صدر نے اس منصوبے میں بیت المقدس (یروشلم) کو اسرائیلی غیر منقسم دارالحکومت قرار دیا اس منصوبے کو تسلیم کرنے کے لیئے فلسطینیوں کو چار سال کا وقت دیا گیا ہے جبکہ اس مدت میں فلسطین کی تمام زمینی سرحدیں حتی کہ سمندری رستے بھی اسرائیلی کنٹرول میں رہیں گے۔

ٹرمپ کے اس فیصلے پر بھی توقع کے عین مطابق آمر اور عیاش عرب حکمرانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی یہ شاہی حکومتیں جو اپنے اکثر معاشی و سیاسی مفادات کے لیئے امریکہ و اسرائیل کا رخ کرتی نظر آتی ہیں بھلا اتنی جرات کب کر سکتی ہیں کہ اس منصوبے کی مخالفت میں کچھ کہ سکیں سینچری ڈیل کی تقریب رونمائی میں امارات، بحرین اور عمان کے سفیروں کی موجودگی اس بات کا جیتا جاگتا ثبوت ہے کہ یہ حکمراں ابھی غیرت کی دیوار نہیں پھلانگ سکے۔ ہاں مگر حماس ابھی زندہ ہے اور امریکہ و اسرائیل سمیت ان عربوں کو بھی اصل خطرہ حماس کی مزاحمت کا ہے ۔

امریکہ جو اس ناجائز ریاست کا سب سے بڑا پشتیبان بنا ہوا ہے نے کچھ عرصہ پہلے بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کیا اگر اس وقت یہ نام نہاد مسلم اتحاد او آئی سی اور اکیالیس ملکی فوجی اتحاد رد عمل دکھاتے تو آج ٹرمپ کو یہ جرات نہ ہوتی کہ وہ یوں دن دیہاڑے فلسطینی حقوق پہ ڈاکہ ڈالتا ۔ اسی خاموشی سے شہ پا کر امریکی صدر نے اس صدی کے سب سے بڑے جھوٹ کی رونمائی کی اس پر سب سے بڑا اعتراض تو یہ بنتا ہے کہ یہ کیسا امن منصوبہ ہے جس میں فریقین میں سے ایک اصل اور اہم فریق موجود ہی نہیں جبکہ دوسرا فریق جو دراصل غاصب ہے وہ اپنے تمام تر حامیوں کے ساتھ موجود ہے ۔

امریکی صدر نے اس منصوبے کو پیش کرتے ہوئے وقت کی اہمیت کو بھی خاص طور پر مدنظر رکھا ہے ایک طرف جب خود اسکے خلاف مواخذے کی تحریک پیش کی جاچکی ایسی صورتحال میں ٹرمپ نے یہ منصوبہ پیش کر کے بااثر یہودی لابی کو خوش کیا جسکا نتیجہ آج یہ نکلا کہ مواخذے کی یہ تحریک ناکامی سے دوچار ہوئی دوسری طرف اس منصوبے کو پیش کرکے یہ کوشش بھی کی گئی کہ تقریبا ایک ماہ بعد اسرائیل میں ہونے والے عام انتخابات میں نیتن یاہو کے لیئے کامیابی کا راستہ ہموار کیا جا سکے۔

ویسے تو امریکہ ہمیشہ گریٹر اسرائیل کے لئے راستہ ہموار کرتا رہا لیکن ٹرمپ نے اپنے چار سالہ دورِ اقتدار میں لاڈلے اسرائیل کے تین انتہائی اہم اقدامات کیئے جن میں سے پہلا بیت المقدس کے بارے میں تھا جسے امریکہ نے اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرتے ہوئے تل ابیب سے اپنا سفارتخانہ وہاں منتقل کیا دوسرا فیصلہ گولان کی انتہائی اہم پہاڑیوں سے متعلق تھا جنہیں سرکاری طور پر صیہونی ریاست کا حصہ تسلیم کیا گیا تیسرا اہم اقدام سینچری ڈیل کی صورت میں اٹھائیس جنوری کو پیش کیا گیا ۔
ہاں مگر فلسطینیوں کے جذبہ حریت کو پوری دُنیا تسلیم کرتی ہے۔ اسرائیل بھلے ہی امریکہ و یورپ سمیت عرب حکمرانوں کا چہیتا کیوں نہ ہو، مگر عوامی سطح پر وہاں بھی ایسے طبقات موجود ہیں جو فلسطینی مزا حمت کو انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں تقریبا 72 سال سے جاری یہ فلسطینی مزاحمت دُنیا بھرکے حریت پسندوں کے لہو کو گرمائے ہوئے ہے ۔

ہاں مگر مظلوم فلسطینی مسلمانوں پر امریکی و اسرائیلی بھیڑیوں کے یہ ظلم و ستم دیکھ کر ہر غیرت مند مسلمان خواہ وہ شیعہ ہو یا سنی سوچتا تو ہوگا کہ آخر یہ عرب حکمران کس کام کے ہیں؟
بقول شاعر۔۔۔۔۔
غیرت زدہ تو ڈوب گیا ایک بوند میں
ہاں مگر بے غیرتوں کو کوئی سمندر نہ ملا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here