روز شہادت باقر الصدرؒ پر قائد ملت جعفریہ پاکستان آیت اللہ سید ساجد علی نقوی کا پیغام
روز شہادت باقر الصدرؒ پر قائد ملت جعفریہ پاکستان آیت اللہ سید ساجد علی نقوی کا پیغام

راولپنڈی/ اسلام آباد۔ 8اپریل2020ء(  جعفریہ پریس  ) قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے ممتاز اسلامی سکالر ماہر اقتصادیات آیت ا ….سید محمد باقر الصدر شہید اور انکی ہمشیرہ سیدہ آمنہ بنت الہدی کی شہادت کی مناسبت سے اپنے پیغام میں کہا ہے کہاسلامی دنیا کی جن ممتاز‘ جید اور اپنے علوم و فنون کی ماہر شخصیات کی بدولت نہ صرف عالم اسلام بلکہ دنیائے عالم ان کے نظریات اور تصورات سے بھرپور انداز میں استفادہ کرکے ترقی و کامرانی کے سفر پر گامزن ہے ان مشاہیر اسلام میں ایک معروف مفکر ‘باصلاحیت اور ہمہ جہت شخصیت کے مالک ہمارے استاد بزرگوار‘ نامور اسلامک سکالر اور بین الاقوامی طور پر پہچانے جانے والے ماہر اقتصاد آیت اللہ سید محمد باقر الصدر کا نام ہے۔آپ کا تعلق نجف اشرف کے اس علمی خانوادے سے تھا جس میں ہر دور میں بلند پایہ علماءپیدا ہوتے رہے۔ تالیف و تحقیق اور تدوین و تدریس کے شعبوں میں شہیدکا کی مہارت اپنی مثال آپ تھی۔علم اصول میں تحقیقی کاوش سے لے کر جیدعلوم پر مبنی تالیفات تک شہید نے اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا۔یہی وجہ ہے کہ اقتصادنا اور فلسفتنا جیسے گرانقد ر علمی خزانے ہر دور کے انسان کی علمی و فکری رہنمائی کا سامان فراہم کرتے ہیں۔جدید علوم و فنون کا احاطہ کرنے والی ان تالیفات نے مارکسیت اور اشتراکیت کے مقابلے میں فلسفہ اسلام اور اسلامی نظام کی حاکمیت اور حقانیت کو نہایت ہی واضح اور ٹھوس انداز میں پیش کیا چنانچہ علمائے اسلام آپ کو چودہ صدیوں میں چوتھا مسلمان فلسفی گردانتے ہیں۔
علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ آپ کی شہرہ آفاق تصنیف ”اقتصادنا“ اقتصادی نظریات کا تنقیدی جائزہ اور اسلامی اقتصادیات کا خاکہ پیش کرتی دکھائی دیتی ہے ۔یہ ایک ناقابل انکار حقیقت ہے کہ اقتصادی مسئلہ انسانی زندگی میں ایک بنیادی حیثیت رکھتا ہے۔ یہ مسئلہ کل کے انسان کے لئے اتنا اہم نہیں تھا جتنا آج کے انسان کے لئے ہوگیا ہے۔ حالات و واقعات اس بات کے شاہد ہیں کہ معاشی حوالوں سے خوشحال اور معاشی بدحالی کے شکار انسان کی زبان و فکرمیں واضح فرق ہوتا ہے۔
انہوں نے کہا کہ منطق‘ فلسفہ اور معاشیات کے بعد نجف اشرف کی علمی درس گاہ حوزہ علمیہ کی ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد اسکی ترتیب و تنظیم ‘ قدیم علوم کو جدید عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کرنا ‘ سود کے مسئلہ پرامت مسلمہ کی رہنمائی جیسے اقدامات ہمیشہ یاد رکھے جائیں گے۔شہید باقر الصدر جمود اور روایت پرستی کے مخالف‘ مذہب کو فعال طاقت اور مذہب سے شغف رکھنے والے کو فعال شخصیت قرار دیا کرتے اور اکثر فرمایا کرتے کہ قوم کو عملی اسلام سے روشناس کراناعلمائے اسلام کی اولین ذمہ داری ہے چاہے اس راہ میں جس قدر بھی مشکلات و مصائب ہی کیوں نہ جھیلنے پڑیں۔
قائد ملت جعفریہ پاکستان نے کہا کہ عالم اسلام کی ایسی بے مثال شخصیات ہمیشہ سامراجی قوتوں کی انکھ کا کانٹا رہیں چنانچہ اسی بدولت استعماری سازشوں کے نتیجے میں1980 میں آیت اللہ سید محمد باقر الصدر کو انکی ہمشیرہ محترمہ سیدہ آمنہ بنت الھدی کے ہمراہ شہید کردیا گیا اور دنیا ہمیشہ کے لئے ایک ایسی شخصیت سے محروم ہوگئی جو نہ صرف اسلامی دنیا کا اثاثہ تھیں بلکہ دنیائے عالم کے لئے ایک رہبر و رہنماءکا درجہ رکھتی تھی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here