مسلمہ ہے کہ چاندکا پیدا ہو چکنا کافی نہیں بلکہ چاند دیکھ کر روزہ رکھنااور چاند دیکھ کر عید کرنا ہے، زاہد آخونزادہ
مسلمہ ہے کہ چاندکا پیدا ہو چکنا کافی نہیں بلکہ چاند دیکھ کر روزہ رکھنااور چاند دیکھ کر عید کرنا ہے، زاہد آخونزادہ

مسلمہ ہے کہ چاندکا پیدا ہو چکنا کافی نہیں بلکہ چاند دیکھ کر روزہ رکھنااور چاند دیکھ کر عید کرنا ہے، زاہد آخونزادہ

رویت ہلال کیلئے طے کیا جائے کہ جدید ترین سائنسی آلات کے ذریعے رویت کافی ہے یا براہ راست، بغیر کسی آلے کی مددکے آنکھ سے دیکھنا ضروری ہے، کج بحثی سے کوئی نتیجہ نہیں نکلے گا، ترجمان قائد ملت جعفریہ

رالپنڈی /اسلام آباد25 جولائی 2020ء( جعفریہ پریس پاکستان) قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کے ترجمان زاہد علی آخونزادہ نے مرکزی رویت ہلال کمیٹی اور وزارت برائے سائنس و ٹیکنالوجی کے مابین رویت ہلال سے متعلق بحث و تکرار پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ علامہ ساجد نقوی کا کہنا ہے کہ یہ تو طے ہے کہ چاند پیدا ہو چکنا ہونا کافی نہیں دیکھنا بہر حال ضروری ہے، چاند دیکھ کر روزہ رکھاجائے اور چانددیکھ کر عیدکی جائے ، اگر آپس میں کج بحثی جاری رہی تو کسی نتیجہ تک نہیں پہنچ سکیں گے جس کے تدارک کیلئے ضروری ہے کہ یہ طے کیا جائے کہ رویت ہلال کیلئے جدید ترین سائنسی آلات کے ذریعے رویت کی جائے یا براہ راست ، بغیر آلے کی مدد کے آنکھ سے دیکھنا ضروری ۔ انہوں نے کہا کہ یہ واضح نہیں ہو سکا کہ جب رویت ہلال کمیٹی کے ہمراہ فلکیات ، موسمیات اور وزارت سائنس و ٹیکنالوجی کے نمائندے بھی موجود ہوتے ہیں رویت ہلال کمیٹی کے فیصلے میں انکی رائے شامل ہوتی ہے تو ایسی صور ت میں رویت کا فی کیوں نہیں سمجھی جاتی؟ مزید کس امر کی ضرورت ہے ؟آخر میں ترجمان قائد ملت جعفریہ کا مزید کہنا تھاکہ رویت ہلال شرعی مسئلہ ہے اسے انا کا مسئلہ نہ بنایا جائے اسلامی نظریاتی کونسل یہ طے کرے کہ آیا رویت ہلال کے بارے میں جدید ترین سائنسی آلات کافی ہیں یا عمومی آنکھ سے دیکھنا ضروری ہے تاکہ آپس کے انتشار سے بچا جا سکے ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here