جعفریہ پریس – اربعین حسینی ؑ 1435 ھ (چہلم شہدائے کربلا) کے موقع پر قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی کا جاری کرده پیغام- جعفریہ پریس کو موصول ہونے والے قائد ملت جعفریہ کے پیغام میں آیا ہے کہ:
نواسہ رسول اکرم ؐ ‘ محسن انسانیت ‘ سید الشہداء حضرت امام حسین علیہ السلام اور شہدائے کربلا کی عظیم قربانی کی یاد اور ان کا چہلم مناتے ہوئے یہ بات امت مسلمہ کے پیش نظر رہے کہ امام عالی مقام ؑ کی ذات اور آپ کے اہداف آفاقی ہیں۔ دنیا بھر میں مختلف مکاتب فکر کے نہ صرف کروڑوں مسلمان بلکہ دیگر مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد بھی انتہائی عقیدت سے امام عالی مقام کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔ اگرچہ اس وقت انسانیت مختلف گروہوں میں بٹ چکی ہے لیکن محسن انسانیت سید الشہدؑ اء کی ذات ان تمام اختلافات اور طبقات کی تقسیم سے بالاتر تمام انسانوں کے لئے نمونہ عمل ہے۔ اس لئے گذشتہ چودہ صدیوں سے انسانیت آپ ؑ کی ذات سے وابستہ رہنے کو اپنے لئے شرف اور رہنمائی کا باعث قرار دے رہی ہے اور بلا تفریق مذہب و مسلک اور خطہ وملک آپؑ کی سیرت سے استفادہ کررہی ہے۔
وحی الہی کے مطابق مسلمان آپس میں بھائی بھائی ہیں اور یہ امت ایک امت ہے۔لہذا تمام مسالک کے جذبات کو ملحوظ خاطر رکھ کر اخوت‘ بھائی چارے‘ باہمی احترام‘ برداشت اور تحمل کا مظاہرہ کیا جائے۔عالم اسلام قائد حریت سید الشہداء حضرت امام حسین علیہ السلام کی فکر انگیز تحریک سے آگاہی و آشنائی حاصل کرکے اتحاد و وحدت‘ مظلومین کی حمایت‘ یزیدی قوتوں سے نفرت کی ارتقائی منازل طے کرکے اپنی اخروی نجات کا سامان بھی فراہم کرسکتا ہے ۔ آزادی کی جدوجہد ہو‘ ظلم و ناانصافی کے خلاف قیام ہو‘ آمریت کے خلاف مزاحمت ہو‘ نیکی پھیلانا اور برائیوں کو مٹانا ہو‘ الغرض یہ ساری مناسبتیں ایسی ہیں جن میں سید الشہداء کی ذات اور کردار‘ ہر زمانے کے انسان کے لئے خواہ وہ کتنا ہی انسانی ارتقاء کی منازل طے کرچکا ہو سرچشمہ ہدایت و رہنمائی ہے۔ صرف اسی صورت میں امت مسلمہ نواسہ رسول اکرمؐ سے اپنی وابستگی و عقیدت کا اظہار صحیح طور پر کرسکتی ہے جب ان کے پاکیزہ ہدف و مقصد سے آگاہی و آشنائی کے ساتھ ساتھ اپنے اندر فکر و عمل کی بنیادوں کو بھی مضبوط بنائے۔
کربلا کے بعد یہ اصول طے ہوگیا کہ رہتی دنیا تک آزادی کی جدوجہد ہو یا ظلم و ناانصافی کے خلاف قیام ، آمریت کے خلاف مزاحمت ہو یا امر بالمعروف و نہی عن المنکر کے فریضے کی انجام دہی۔ ہر مرحلے میں سیدالشہداء ؑ کی ذات اور کردار کو رہنماء تسلیم کیا جائے گا اور اپنی جدوجہد کی بنیاد حسین ؑ کی سیرت اور اصولوں کو مدنظر رکھ کر رکھی جائے گی۔ یہی وجہ ہے کہ ماضی میں جتنی تحریکوں، جدوجہد اور انقلابات نے فکر حسینی سے صحیح استفادہ کیا وہ دنیا پر غالب ہوئے اور اپنے اہداف میں کامیاب اور کامران ہوئے۔
عزاداری سیدالشہدا ؑ کے پروگرام اور تقاریب فکر حسینی کی ترویج کا ذریعہ ہیں جبکہ پاکستان کے شہریوں کے آئینی و قانونی حقوق اور شہری وانسانی آزادیوں کا حصہ ہیں لہذا عزاداری کے پروگراموں کو روکنا یا ان میں رکاوٹ ڈالنا دراصل فکر حسینی کی ترویج کو روکنے کے مترادف ہے۔ اس فلسفے کے تحت ہم یہ بات کہنے میں حق بجانب ہیں کہ عزاداری کے انعقاد کے لئے ہمیں کسی قسم کی اجازت لینے کی ضرورت نہیں بلکہ ریاست کا فرض ہے کہ وہ اپنے شہریوں کی آزادیوں اور حقوق پر قدغن نہ لگائے اور ان کی آزادیوں کی حفاظت کرے اورعزاداری و ماتم داری کے جلوسوں اور مجالس کے انعقاد کے سلسلے میں اپنی انتظامی ذمہ داریاں دیانت داری سے ادا کرے-

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here