• اسلامی تحریک پاکستان صوبہ سندھ کا اجلاس کراچی میں منعقد ہوا
  • عزاداری مذہبی و شہری آزادیوں کا مسئلہ، قدغن قبول نہیں، علامہ شبیر میثمی
  • قائد ملت جعفریہ علامہ ساجد نقو ی کی ا پیل پر بھارت میں توہین آمیز ریمارکس پر ملک گیر احتجاج
  • قائد ملت جعفریہ پاکستان کی مختلف شخصیات سے ان کے لواحقین کے انتقال پر تعزیت
  • اسلامی تحریک پاکستان کا گلگت بلتستان حکومت میں شامل ہونے کا فیصلہ
  • علماء شیعہ پاکستان کے وفدکی وفاقی وزیر تعلیم سے ملاقات نصاب تعلیم پر گفتگو مسائل حل کئے جائیں
  • بلدیاتی انتخابات سندھ: اسلامی تحریک پاکستان کے امیدوار بلامقابلہ کامیاب
  • یاسین ملک کو دی جانے والی سزا ظلم پر مبنی ہے علامہ شبیر حسن میثمی شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • ملی یکجہتی کونسل اجلاس علامہ شبیر میثمی نے اہم نکات کی جانب متوجہ کیا
  • کراچی میں دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان صوبہ سندھ

تازه خبریں

امام حسین (ع) کے کربلا کی جانب اٹھنے والے ہر قدم میں ہمارے لیے ایک درس پوشیدہ ہے، ساجد علی ثمر

جعفریہ پریس – واقعہ کربلا کوئی عام واقعہ نہیں تھا کہ ہوا اور ختم ہو گیا۔ بلکہ واقعہ کربلا سے تمام اقوام عالم کو انسانی اقدار کا سبق ملا کہ کس طرح حضرت امام حسین (ع) نے قربانی دے کر انسانی اقدار کی حفاظت کی۔ اس وقت صورت حال یہ تھی کہ رشتوں کا لحاظ ختم ہو چکا تھا اور یزید علی الاعلان انکار نبوت کر رہا تھا۔ لوگ اس کے ڈر کی وجہ سے اس کی ہاں میں ہاں ملا رہے تھے۔ ایسے مشکل حالات میں امام حسین (ع) نے اپنے نانا کا پرچم اٹھایا اور سہمے ہوئے دلوں کو ایک نئی آواز دی اور اس شرابی کے غیر اسلامی رویوں کے سامنے اٹھ کھڑے ہوئے۔ امام حسین (ع) کی وہ صدا آج بھی فضاوں میں گونج رہی ہے کہ جو صدا آپ نے مدینہ سے نکلتے ہوئے اپنے قیام کے مقصد کے طور پر کہی تھی کہ ”میں کرہ ارض پر فساد کرنے کے لیے نہیں جا رہا بلکہ یزید لعین رشتوں کا پاس بھول چکا ہے اور امت محمدی کو اصلاح کی ضرورت ہے لہٰذا میں اسی امت محمدی کی اصلاح کا فریضہ سرانجام دینے کے لیے نکل رہا ہوں۔“
اس کے علاوہ امام حسین (ع)  کے کربلا کی جانب اٹھنے والے ہر قدم میں ہمارے لیے ایک درس پوشیدہ ہے۔ امام (ع) نے راستے میں کبھی ایک نصرانی کو ساتھ ملایا تو کبھی ایک عثمانی شیعہ کو ساتھ ملا کر یہ اعلان کر رہے ہیں کہ جب تم حق کے راستے پر ہو تو آخری وقت تک یہ کوشش جاری رکھو کہ تمام لوگوں کو ساتھ ملا کر چلو۔ اور اتحاد کی فضا کے ساتھ چلو۔ کربلا میں بھی آخری وقت تک آپ نے مقابل فوج کو دعوت اسلام اور اتحاد کا درس دیتے رہے اور اسی درس کا نتیجہ تھا کہ حضرت حر یزیدی فوج کو چھوڑ کر امام حسینؑ سے آ ملے۔ آج ہمیں اپنے آپ سے اور اپنے امام سے عہد کرنا ہو گا کہ ہم امام کے اس مشن کو آگے بڑھائیں گے اور ہمیشہ اتحاد امت کی فضا کو برقرار رکھنے اور انسانی اقدار کو ان کے اوج کمال تک پہنچانے میں ہر ممکن سعی کریں گے۔