• علامہ رمضان توقیر سے علامہ آصف حسینی کی ملاقات
  • علامہ عارف حسین واحدی سے علماء کے وفد کی ملاقات
  • حساس نوعیت کے فیصلے پر سپریم کورٹ مزیدوضاحت جاری کرے ترجمان قائد ملت جعفریہ پاکستان
  • علامہ شبیر میثمی کی زیر صدارت یوم القد س کے انعقاد بارے مشاورتی اجلاس منعقد
  • برسی شہدائے سیہون شریف کا چھٹا اجتماع ہزاروں افراد شریک
  • اعلامیہ اسلامی تحریک پاکستان برائے عام انتخابات 2024
  • ھیئت آئمہ مساجد و علمائے امامیہ پاکستان کی جانب سے مجلس ترحیم
  • اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیل کا اجلاس اسلام آباد میں منعقد ہوا
  • مولانا امداد گھلو شیعہ علماء کونسل پاکستان جنوبی پنجاب کے صدر منتخب
  • اسلامی تحریک پاکستان کے زیر اہتمام فلسطین و کشمیر کانفرنس

تازه خبریں

سانحہ راولپنڈی بین الاقوامی سازش کا حصہ ہے،اگر حکمراں واقعی ملک میں حقیقی امن کے خواہاں ہیں تو ان کو اس سازش کے پیچھے کار فرما ہاتھوں کو بے نقاب کرنا ہوگا،صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر

  سانحہ راولپنڈی کے بارے میں علامہ ساجد علی نقوی، مولانا سمیع الحق، لیاقت بلوچ، علامہ امین شہیدی، حافظ محمد سعیداور سینٹر سراج الحق سمیت دیگر اکابرین اور قائدین سے رابطے اور ان سے فرقہ وارانہ آگ بجھانے کےلئے مشورے ہوئے سب کی متفقہ رائے یہ تھی کہ یہ سانحہ پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی بین الاقوامی سازش کا ایک حصہ ہے، مصر اور شام میں جو فرقہ واریت کی آگ بھڑکائی جارہی ہے یہ اسی عالمی سازش کی ایک کڑی ہے۔ ان خیالات کا اظہار ملی یکجہتی کونسل کے سربراہ صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر نے حیدرآباد پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔
صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر نے کہا کہ پاکستان کے محب وطن عوام کا فرض بنتا ہے کہ وہ اس نازک موقع پر اپنے اتحاد سے اس سازش کو ناکام بنادیں۔ ملی یکجہتی کونسل نے جو ضابطہاخلاق علامہ شاہ احمد نورانی کی قیادت میں بنایا تھا تمام مسالک کے لوگ اس پر متفق ہیں اور باہم اتفاق و اتحاد سے رہتے ہیں بالخصوص محرم سے قبل ملی یکجہتی کونسل کی طرف سے ملک کے مختلف حصوں میں اتحاد امت کانفرنسیں منعقد ہوئیں جس میں تمام مسالک کے علماء ، قائدین اور عوام نے ایک ساتھ شرکت کرکے باہم اتفاق و اتحاد کا ثبوت دیا لیکن بعض شرپسند غیر ملکی ایجنٹوں کو یہ اتحاد پسند نہ آیا اور انہوں نے راولپنڈی میں فرقہ وارانہ تعصبات کی آگ بھڑکا کر پورے ملک کو اس آگ میں جھوکنے کی سازش کی، اس واقعہ پر جن شرپسندوں نے مساجد، مدارس، امام بارگاہوں اور مارکیٹوں کو جلایا اور بے گناہ لوگوں کا قتل عام کیا حکمرانوں کی ذمہ داری ہے کہ ایک ایک دہشت گرد کو پکڑے اور اس کو کیفر کردار تک پہنچائے، ایسے عناصر کے خلاف حکمراں پہلے بھی مصلحت کا شکار ہوتے رہے ہیں اور دہشت گردوں کی سرپرستی کرتے رہے ہیں جس کی وجہ سے اس قسم کے سانحات رونما ہوتے رہتے ہیں، محض عدالتی کمیشن قائم کرنے سے کام نہیں بنے گا۔
ملی یکجہتی کونسل کے سربراہ  نے مزید کہا کہ  اگر حکمراں واقعی ملک میں حقیقی امن کے خواہاں ہیں تو ان کو اس سازش کے پیچھے جو ہاتھ کار فرما ہیں ان کو بے نقاب کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ ملک میں بدامنی، خونریزی، لاقانونیت کو فروغ دینے والوں کو قانون کی گرفت میں لانا ہوگا اور قرار واقعی سزائیں دے کر عبرت کا نشان بنانا ہوگا۔
ملی یکجہتی کونسل کے سربراہ نے کہا کہ سانحہ راولپنڈی سے پنجاب حکومت کی ناہلی تو کھل کر سامنے آگئی تھی لیکن بعد میں صوبائی حکومت کی بے بسی بھی ظاہر ہوگئی کہ وہ اس آگ کو دیگر شہروں میں پھلنے سے نہ روک سکی اور اس سے زیادہ وفاقی حکومت کی بے حسی بھی ظاہر ہوگئی کہ ملک آگ میں جلتا رہا اور وزیراعظیم کو اپنا غیر ملکی دورہ مختصر کرکے واپس آنے کی توفیق نہیں ہوئی، ہم ہائی کورٹ کے جج کی نگرانی میں قائم ہونے والے کمیشن سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس واقعہ کا باریک بینی سے جائزہ لے اور اس کے اصل محرکات کو سامنے لائے اور حکومت صرف فیکٹ فائینڈنگ کمیشن کی رپورٹ تک محدود نہ رہے بلکہ عدالتی کمیشن اور فیکٹ فائینڈنگ کمیشن کی رپورٹوں کی روشنی میں بلا امتیاز اور جلد اس واقعہ کے ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کرکے مجرموں کو جلد کیفر کردار تک پہنچائے۔
پریس کانفرنس میں شیعہ علماء کونسل پاکستا کے آغا محمد قمبرانی، جماعت اسلامی کے عبدالوحید قریشی، مجلس وحدت مسلمین کے مولانا امداد نسیمی،  جمعیت علماء پاکستان کے ڈاکٹر محمد یونس دانش سمیت دیگر رہنما بھی موجود تھے۔