• کوئٹہ میں ہونے والی دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • علامہ شبیر حسن میثمی کا علامہ سید علی حسین مدنی کے کتابخانہ کا دورہ
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے علمی حلقوں میں خلاء پیدا ہوا علامہ شبیر حسن میثمی
  • مسئول شعبہ خدمت زائرین ناصر انقلابی کا دورہ پاکستان
  • علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کی نواب شاہ میں پریس کانفرنس

تازه خبریں

شیعہ علماء کونسل ضلع کوہاٹ کے سیکرٹری اطلاعات شیر محمد طوری کی دہشتگردوں کے ہاتھوں ٹارگٹ کلنگ کی مذمت – شہید کے قاتلوں کو فی الفور گرفتار کیا جائے

جعفریہ پریس – شیعہ علماء کونسل پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ عارف حسین واحدی نے کہا کہ ملک میں کسی کی جان محفوظ نہیں ہے، جب تک دہشت گردوں اور قاتلوں کو کیفر کردار تک نہیں پہنچایا جائےگا اس وقت تک امن قائم ہونا ممکن نہیں اگر رےاست ہی مجرموں کو محترم سمجھے گی تو شہریوں کا محافظ کون ہوگا، شیر محمد طوری کے قاتلوں کو فی الفور گرفتار کیا جائے۔ شیعہ علماءکونسل ضلع اسلام آباد کے صدر احمدعلی طوری کی بھی واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت، عوام کے جان و مال کا تحفظ ریاست کی ذمہ داری ہے۔
ان خیالات کا اظہار انہوں نے شیعہ علماءکونسل ضلع کوہاٹ کے سیکرٹری اطلاعات شیر محمد طوری کی دہشتگردوں کے ہاتھوں ٹارگٹ کلنگ کی مذمت کرتے ہوئے کیا جنہیں گزشتہ روز کوہاٹ میں دہشت گردوں نے فائرنگ کرکے شہید کردیا تھا۔ علامہ عارف حسین واحدی نے کہاکہ ملک میں صحافی ، وکلاء سیکورٹی اہلکار ، ججز ،علماء ، بے یارو مدد گار مسافر اور عبادت گاہوں میں مصروف لوگوں تک کو تحفظ حا صل نہیں ۔انہوں نے کہا کہ جب تک ریاست کی رٹ کو بحال نہیں کیا جاتا اور مجرموں ،قاتلوں اور دہشت گردوں کو احترام دینے کی بجائے ان پر آہنی ہاتھ نہیں ڈالا جائے گا اس وقت ملک میں امن کا خواب شرمندہ تعبیر کیسے ہوگا۔
علامہ عارف حسین واحدی نے مزید کہا کہ دہشت گرد سرعام دندناتے پھر رہے ہیں اور سر عام ریاستی رٹ کو چیلنج کیا جا رہا ہے جب تک حکومت اس معاملے پر سنجیدہ اقدامات نہیں اٹھاتی اور جزاء سزا کا عمل شروع نہیں کیا جاتا اس وقت تک قوم میں اضطراب رہے گا اور بے گناہ عوام کے قتل عام کا سلسلہ بھی جاری رہے گا اس لئے حکومت کو کسی تاخیر کے بجائے فی الفور قاتلوں اور دہشت گردوں کے خلاف قدم اُٹھانا ہوگا اور دہشت گردی کو اس کی جڑ سے اکھاڑ پھینکنا ہو گا تبھی پاکستان صحیح معنوں میں فلاحی و جمہوری ریاست کے طور پر دنیا کے نقشے پر اُبھر سکتا ہے ۔
. شیعہ علماءکونسل ضلع اسلام آباد کے صدر احمد علی طوری نے بھی واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ عوام کے جان و مال کا تحفظ ریاست کی ذمہ داری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شہید شیر محمد طوری کی دینی و ملی خدمات کو تا دیر یاد رکھا جائےگا