• کوئٹہ میں ہونے والی دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • علامہ شبیر حسن میثمی کا علامہ سید علی حسین مدنی کے کتابخانہ کا دورہ
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے علمی حلقوں میں خلاء پیدا ہوا علامہ شبیر حسن میثمی
  • مسئول شعبہ خدمت زائرین ناصر انقلابی کا دورہ پاکستان
  • علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کی نواب شاہ میں پریس کانفرنس

تازه خبریں

شیعہ علماء کونسل کراچی کے زیر اہتمام سانحہ تفتان و کراچی ایئرپورٹ پر دہشت گردی کے خلاف حسین آباد امام بارگاہ سے احتجاجی ریلی اور علامتی دھرنا

جعفریہ پریس  قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی کے حکم پر ملک بھر کی طرح شیعہ علما کونسل پاکستان کراچی اور ملیر زون کی جانب سے سانحہ تفتان و کراچی ایئرپورٹ پر دہشت گردی کے خلاف احتجاجی ریلی حسین آباد امام بارگاہ سے نکالی گئی ۔ جس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ اس موقع پر شیعہ علما کونسل پاکستان سندھ کے سیکریٹری  جنرل علامہ سید ناظر عباس تقوی، کراچی ڈویژن کے صدر علامہ جعفر سبحانی، کراچی ڈویژن کے سیکریٹری جنرل علامہ فیاض مطہری کے علاوہ دیگر شیعہ و اہلسنت علما نے خطاب کیا اور شہدائے تفتان کے ساتھ اظہار ہمدردی کیا۔ علامہ ناظر عباس تقوی کا کہنا تھا کہ سانحہ تفتان حکمرانوں کی بے حسی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج پاکستان کی ہر گلی میں شیعوں کو مارا جا رہا ہے اور حکمران بے حسی کی نیند سو رہے ہیں۔مقررین نے اپنے تقاریر میں کہا کہ  سانحہ کراچی ائیر پورٹ اور سانحہ تفتان پر قوم کو یہ سوچنے پر مجبور کردیا ہے کہ دھشتگردوں کو اس طرح چھوٹ ملی ہوئی ہے کہ وہ جب اور جہاں چاہتے ہتے ہیں کاروائی کرسکتے ہیں اور ہمارے سیکیورٹی ، حساس اور انتظامیہ کے ادارے نہ صرف ان کے سامنے بے بس نظر آتے ہیں بلکہ شرپسند عناصر کی گرفتاریوں کے بعد بری ہوکر آزاد ہونا یا پہر جیلوں پر حملہ کر کے انہیں آزاد کرا دینا اور عرصہ دراز سے قصاص جیسے الہی قانون کو روکتے ہوئے ان خونی قاتلوں کو تختہ دار سے بچانے سے قوم یہی سوچنے پر مجبور ہوتی ہے کہ حکومتیں نہ صرف ان خونی دھشتگردوں کا مقابلہ نہیں کرنا چاہتی بلکہ ان کو مکمل چھوٹ دی ہوئی ہے ۔ اسی سلسلے میں ایک کالعدم جماعت جو کہ ملت تشیع کے قتل عام میں ملوث ہے اور اس کا برملا اظہار بھی کرتی ہے ، اس کے آزادانہ اور بڑی پیمانے پر ملک کے مختلف علاقوں میں پروگرامز کئے جارہے ہیں اور اس پروگرامز میں ملک کے موجودہ تمام قوانین کو ٹھکرایا جارہا ہے اور تکفیری اور غلیظ نعرے بلندکر کے شرپسندی پھلائی جا رہی ہے مگر افسوس کے انتظامیہ نہ صرف شرپسندی پہلانے میں رکاوٹ نہیں بنتی بلکہ اکثر مقامات میں انہیں پروٹوکول دے کر اور ان سے مکمل تعاون کر کے ان کی مکمل سرپرستی ہو رہی ہے ۔
ہم حکومت اور انتظامیہ کو اس بات کی طرف متوجہ کراتے ہیں کہ قائد ملت جعفریہ حضرت علامہ سید ساجد علی نقوی کے اعلان کے مطابق ہمارے پاس تمام آپشنز موجود ہیں ۔ہم صرف قومی قیادت کے حکم کے منتظر ہیں ۔