• حساس نوعیت کے فیصلے پر سپریم کورٹ مزیدوضاحت جاری کرے ترجمان قائد ملت جعفریہ پاکستان
  • علامہ شبیر میثمی کی زیر صدارت یوم القد س کے انعقاد بارے مشاورتی اجلاس منعقد
  • برسی شہدائے سیہون شریف کا چھٹا اجتماع ہزاروں افراد شریک
  • اعلامیہ اسلامی تحریک پاکستان برائے عام انتخابات 2024
  • ھیئت آئمہ مساجد و علمائے امامیہ پاکستان کی جانب سے مجلس ترحیم
  • اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیل کا اجلاس اسلام آباد میں منعقد ہوا
  • مولانا امداد گھلو شیعہ علماء کونسل پاکستان جنوبی پنجاب کے صدر منتخب
  • اسلامی تحریک پاکستان کے زیر اہتمام فلسطین و کشمیر کانفرنس
  • ملک کا امن شرپسندوں اور دہشتگردوں کے خاتمے میں مضمر ہے، علامہ شبیرمیثمی
  • اسلامی تحریک پاکستان کا ویڈیو لنک اجلاس اہم فیصلہ جات

تازه خبریں

قائد ملت جعفریہ کے اہم اور پالیسی ساز خطاب سے شیعہ علماء کونسل پاکستان کا 3 روزہ مرکزی جنرل کونسل کا اجلاس اختتام پذیر

جعفریہ پریس – شیعہ علماء کونسل پاکستان کی مرکزی جنرل کونسل کا 3 روزہ اجلاس 25 اپریل سے 27 اپریل تک جامعہ الامام الصادق اسلام آباد کراچی کمپنی میں جاری رہا ۔ جعفریہ پریس کے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق آج 27 اپریل کو مرکزی جنرل کونسل کے اجلاس میں مختلف امور پر غور خوض کیا گیا اور قومی پلیٹ فارم کے دستور میں مجوزہ ترامیم  کو ووٹنگ کے ذریعے تایید کیا گیا۔ اجلاس میں یہ اعلان کی گیا کہ ملی پلیٹ فارم نے ملک بھر کے سیاسی امور میں رول ادا کیا ہے اور ابھی گلگت بلتستان کے انتخابات ہوں گے ،بھرپور مشارکت کا بنیادی اعلان کردیا ہے تا ہم طریقہ کار حالات کے مطابق ہوگا ۔ جعفریہ پریس کے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق جنرل کونسل اجلاس کے اختتام پر13 متفقہ قراردادیں بھی منظور کی گئیں جس میں حکومت سے سزائے موت کے منتظر 68 دہشت گردوں کی سزا پر فی الفور عمل درآمد کا مطالبہ کیا گیا ہے- شام اور بحرین کے لئے ہونے والی مبینہ بھرتیوں پر تشویش کا اظہار کیا گیا – حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وفاقی شرعی عدالت اور مذہبی تحقیق کے اداروں میں تمام مکاتب فکر کو نمائندگی دی جائے۔ گلگت بلتستان کو مکمل آئینی و قانونی حقوق دیئے جائیں اور سرکاری ملازمتوں کے لئے فرقہ کا خانہ ختم کیا جائے۔۔ قراردادیں شیعہ علماء کونسل پاکستان کے سیکرٹری جنرل علامہ عارف حسین واحدی نے پیش کیں۔
تیرے روز کی آخری نشست کے اختتام پر قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے اہم اور پالیسی ساز خطاب کیا۔