• ٹیکسز کی بھر مار کا بجٹ، عوام سے محبت نہیں دشمنی کےمترادف ہے
  • مالی سال 2024-25 کے تعلیمی بجٹ پر نظر ثانی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ مرکزی صدر جے ایس او پاکستان
  • امام خمینی کی برسی پر علامہ شبیر حسن میثمی کا پیغام
  • پاک ایران بارڈر پر پھنسے زائرین کا مسئلہ فوری حل کیا جائے شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان سندھ کی نو منتخب کابینہ کی حلف برداری
  • ڈاکٹر سید ابراہیم رئیسی اور ان کے ساتھیوں کی شہادت عالم اسلام کے لئے بہت بڑا دھچکا ہے
  • ٹیلی کمیونی کیشن اتھارٹی اشتہار ناکافی ہے امن و امان کو تہہ و بالا کرنیوالوں کو نظراندازکردیاگیا
  • جعفریہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان کی مرکزی کابینہ کا اعلان کردیا گیا
  • علامہ شبیر حسن میثمی کی ایرانی صدر سید ابراہیم رئیسی اور ان کے رفقاء کی شہادت پر تعزیت
  • علامہ عارف حسین واحدی نے گورنر پنجاب سردار سلیم حیدر خان سے ملاقات کی

تازه خبریں

امام محمد تقیؑ نے سنگین حالات میں فریضہ امامت حکمت عملی اور بصیرت کے ساتھ ادا کیا

امام محمد تقیؑ نے سنگین حالات میں فریضہ امامت حکمت عملی اور بصیرت کے ساتھ ادا کیا

راولپنڈی / اسلام آباد6 جون 2024   ء (       جعفریہ پریس پاکستان     )قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے نویں امام حضرت امام محمد تقی ؑ  کے یوم شہادت (29 ذیقعد)  کی مناسبت سے پیغام میں کہا ہے کہ آپ  کو اپنے اجداد،آئمہ اطہار اور رسول اکرم ۖکی تعلیمات کو اور مشن کو مختصر عرصے کیلئے آگے بڑھانے کا موقع ملالیکن یہ مختصر عرصہ بھی تاریخ میں انمٹ نقوش رقم کر گیا اور ہر قسم کے سنگین حالات میں فریضہ امامت انتہائی ذمہ داری، حکمت عملی اور بصیرت کے ساتھ انجام دیا جس کے طفیل آج دنیا امامت کے فیوض و برکات سے گذشتہ کئی صدیوں سے فیض یاب ہورہی ہے۔حضرت   کا  یہ فرمانا کہ ”کلام کی زینت فصاحت’ ایمان کی عدالت’ عبادت کی سکون قلب’ علم کی تواضع’ عقل کی ادب’ حلم کی کشادہ دلی’ خوف خدا کی گریہ طویل اور نفس کی زینت ریاضت ہے” درحقیقت عالم بشریت کے لئے ابدی رہنما اصول ہیں۔علامہ ساجد نقوی نے کہا کہ حضرت امام محمد تقی الجواد  نے جہاں امت مسلمہ کو قرآن کے الہی احکامات ، رسول اکرم ۖ  کی سیرت طیبہ اور آئمہ معصومین کے فرامین مقدسہ کی طرف متوجہ رکھا وہاں ہر میدان اور ہر مرحلے میں وارث نبی ۖ ہونے کے ناطے امت کی رہنمائی فرمائی۔ یہ رہنمائی صرف اپنے حلقہء ارادت تک نہیں بلکہ عام مسلمان سے لے کر اس وقت کے حکمرانوں تک سب کے لیے یکساں اور برابر تھی یہی وجہ ہے کہ آپ نے اپنے آباء کی طرح امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کا نبوی ۖفریضہ انجام دیااور اس راستے میں شدید مشکلات برداشت کیں۔آپ کے والد گرامی امام رضا   مخالفین کی طعن و تشنیع  کے جواب میں فرماتے ”اولاد کا ہونا خالق کائنات کے امر سے ہے عنقریب میرا رب مجھے صاحب اولاد کرے گا اور ایک ایسے فرزند سے نوازے گا جو سلسلہ امامت کا حقیقی وارث ہوگا اور مخلوق خدا کی ہدایت و رہنمائی کرے گا”۔علامہ ساجد نقوی نے کہا کہ امام محمد تقی   نے امت مسلمہ کو تا قیامت رہبری و رہنمائی کا سامان بہم کرنے کے لیے جس انداز سے حکمت عملی ترتیب دی اور جس طرح حکمرانوں اور دین مخالف طبقات کی سازشوں کا مقابلہ فرمایا اس کی مثال نہیں ملتی ۔ قائد ملت جعفریہ پاکستان نے امت مسلمہ پر زور دیا کہ وہ حضرت امام محمد تقی    کی سیرت اقدس کا مطالعہ کرکے اس پر حقیقی معنوں میں عمل پیرا ہونے کی جدوجہد کریں تاکہ قیامت تک مکمل استقامت اور واضح اور روشن  راستے کے ذریعے عمل کیا جا سکے اور آخرت کی فلاح حاصل کی جا سکے۔