نجف اشرف، کربلا اور مشہد مقدس جانے والے زائرین کو بلوچستان داخلے سے روکنے پر خاموش نہیں رہیں گے، علامہ مظہر علوی
ژوب کے مقام پربھکر میانوالی سے جانے والی بسو ں کوروکنے پرچیف جسٹس از خود نوٹس لیں، رہنما شیعہ علما کونسل
لاہور (جعفریہ پریس ) شیعہ علماکونسل پاکستان کے نائب صدر اور مسﺅل امور حج و زیارات علامہ مظہر عباس علوی نے نجف اشرف، کربلا اور مشہد مقدس جانے والی پانچ بسو ں کے قافلے کو پولیس کی طرف سے بلوچستان میں داخلے سے روکنے کی مذمت کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار سے اس غیر قانونی اقدام کا از خود نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ میڈیا سیل کی طرف سے جاری اعلامیہ میں انہوںنے کہا کہ میانوالی اور بھکر سے جانے والی پانچ بسوں کو ضلع ژوب میں بے بنیاد اور غیر قانونی جواز پر روک لیا گیا کہ زائرین کے پاس این او سی نہیں۔ یہ پولیس اور حکومت بلوچستان کا غیر اخلاقی اور غیر آئینی اقدام ہے۔ جس پر خاموش نہیں رہیں گے۔ملک کے کسی بھی حصے میں جانے کے لئے کسی شہری کو این او سی کی ضرورت نہیں ہے۔ سینکڑوں افراد کو بلوچستان داخلے سے روکنا قابل مذمت اقدام ہے۔ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی زائرین کے مسئلے کو حل کرنے کے احکامات جاری کرچکے ہیں اور ایسا پہلے کبھی نہیں ہوا کہ زائرین کو بلوچستان میںداخلے سے روکا جائے۔ ایسے کسی جواز کو ہر گز تسلیم نہیں کریں گے۔تفتان کا راستہ سستا اور آسان بھی ہے۔ اس لئے حکومت بلوچستان غیر آئینی اقدامات سے باز آجائے ورنہ شدید احتجاج کریں گے۔ ملت جعفریہ میں صوبائی حکومت کے بلاجواز غیر آئینی اقدامات پر بڑی تشویش پائی جاتی ہے۔  

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here