• کوئٹہ میں ہونے والی دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • علامہ شبیر حسن میثمی کا علامہ سید علی حسین مدنی کے کتابخانہ کا دورہ
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے علمی حلقوں میں خلاء پیدا ہوا علامہ شبیر حسن میثمی
  • مسئول شعبہ خدمت زائرین ناصر انقلابی کا دورہ پاکستان
  • علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کی نواب شاہ میں پریس کانفرنس

تازه خبریں

شرم کی بات ہے کہ اسلامی ملک میں اسلامی مرکز میں عبادت کرنے والوں کیلئے پولیس پہرہ دے،علامہ محمد رمضان توقیر

جعفریہ پریس- مرکز اہلبیت مانسہرہ میں جشن میلاد مرتضےٰ کے ایک بہت بڑے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے  شیعہ علماء کونسل خیبر پختونخوا کے صوبائی صدرعلامہ محمد رمضان توقیر نے کہا ہے کہ مولا علی ؑ کی سیرت وکردار میں ہمیں علم کی ترویج و اہمیت اور اخوت برادری، رواداری نمایاں نذر آتی ہے۔ مولا علیؑ نے خدا کے عطا کردہ تحفہ علم کے ذریعہ اسلام و مسلمین کی خدمت کی۔ مشکل مشکل مسائل کو اپنے علم و حکمت سے احسن انداز میں حل فرماتے اور خلفاء کے دور میں ہمیشہ مشکلات کے حل میں ان سے تعاون کئے یہاں تک کہ حضرت عمر بن خطاب کو کہنا پڑا کہ اگر علی نہ ہوتے تو عمر ہلاک ہو جاتا۔
انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آج ہم انہیں ہستیوں کا نام استعمال کر کے کفر کے فتوے لگا رہے ہیں بلکہ ایکدوسرے کے جانی دشمن ہو گئے ہیں۔ مساجد محفوظ نہیں، بازار مدارس محفوظ نہیں آجکل مسلمان خصوصاً پاکستان کا مسلمان اسلام کے چہرے پر بد نما داغ نظر آرہا ہے۔
علامہ محمد رمضان توقیر نے کہا کہ آج وقت کی ضرورت ہے کہ علی کی سیرت پر عمل کرتے ہوئے دینی مدارس کو مضبوط کریں ، علم سے دوستی کریں اور علماء حقہ سے ربطہ رکھیں۔انہوں نے مزید کہا کہ سنی شیعہ کی تفریق کو ختم کر کے حصول مقصد پاکستان کے لیے ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر میدان عمل میں آئیں۔ آج علماء کی ذمہ داری سب سے بڑھ کر ہے کہ اگر علماء نے اپنا حق ادا کیا تو انتظامیہ مجبور ہو گی۔ شرم کی بات ہے کہ اسلامی ملک میں اسلامی مرکز میں عبادت کرنے والوں کیلئے پولیس پہرہ دے۔انہوں نے تمام مسلمانوں سے اتحاد ووحدت مولا علی کی ولایت سے سر شار رہنے کی اپیل کی۔