• تعلیم یافتہ نسل ، ملک و قوم کی ترقی کی ضمانت ہے، علامہ ڈاکٹر شبیرحسن میثمی
  • کوئٹہ میں ہونے والی دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں شیعہ علماء کونسل پاکستان
  • علامہ شبیر حسن میثمی کا علامہ سید علی حسین مدنی کے کتابخانہ کا دورہ
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے علمی حلقوں میں خلاء پیدا ہوا علامہ شبیر حسن میثمی
  • مسئول شعبہ خدمت زائرین ناصر انقلابی کا دورہ پاکستان
  • علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت

تازه خبریں

ضرب عضب کی کامیابیوں کے بعد مختلف شہروں میں فوج کی تعیناتی اور اس قسم کے اقدامات کا جواز باقی نہیں رہتا۔علامہ ساجد نقوی

قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے حکومت کی جانب سے محرم الحرام میں مختلف شہروں میں فوج و دیگر حفاظتی اقدامات کے اعلانات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ عرصہ دراز سے ملک میں امن و امان کی صورت حال انتہائی خراب چلی آرہی ہے جس پرملک میں امن و امان برقرار رکھنے کے لئے حکومت کو ضرب عضب جیسا اقدام اٹھانا پڑا اور اس اقدام کے بعد ضرب عضب میں کامیابیاں بھی حاصل ہوئیں چنانچہ یہ آپریشن کئی مرحلے طے کرچکا ہے۔کامیابیوں کے ان مراحل کے طے کرنے کے بعد محرم الحرام میں اچھا تاثر ابھارنا اور عوام کی بے چینی اور اضطراب کا خاتمہ کرنا ضروری تھااس تناظر میں مختلف شہروں میں فوج کی تعیناتی اور اس قسم کے اقدامات کا جواز باقی نہیں رہتا اس سے کشیدگی اور صورت حال کی خرابی کا منفی اثر ابھرتا ہے جس سے پہلو تہی ضروری ہے۔لہذا مروجہ قوانین کے ذریعے ہی حالات کو کنٹرول کرنا چاہیے اور لاء اینڈ آرڈر کو نافذ کرنے والے اداروں کو متحرک کرنا چاہیے تاکہ ایام غم میں عوام کی مذہبی اور شہری آزادیوں کاپرسکون انداز میں مکمل تحفظ ہوسکے۔
علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ نواسہ رسول اکرم ؐ ‘ محسن انسانیت حضرت امام حسین علیہ السلام پوری امت کے امام اور پیشوا ہیں ضرورت اس امر کی ہے ان ایام میں کسی دوسرے کے مسلک کو چھیڑنے کی بجائے صرف اپنا نقطہ نظر پیش کیا جائے۔ چونکہ عزاداری سید الشہداء ؑ و جبر کے خلاف جہاد کرنے کا جذبہ عطا کرتی ہے اور اس سے انسان کے ذاتی رویے سے لے کر اجتماعی معاملات میں انقلاب رونما ہوتا ہے۔