• علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کی نواب شاہ میں پریس کانفرنس
  • اپنے تنظیمی نظام اور سسٹم کو مضبوط سے مضبوط کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ ورکر کنونشن
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات علمی حلقوں میں خلا مشکل سے پُر ہوگا علامہ شبیر میثمی
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان صوبہ سندھ کا سیہون حادثے پر افسوس
  • سیہون شریف حادثہ دردناک ہے لواحقین سے تعزیت کرتے ہیں علامہ عارف واحدی

تازه خبریں

ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں ، عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں،قائد ملت جعفریہ پاکستان

جعفریہ پریس- قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے  ملک کی موجودہ امن وامان کی صورتحال خصوصاً سانحہ عاشور راولپنڈی، ملتان، چشتیاں، ہنگواور حالیہ سانحہ کراچی سمیت ملک کے دیگرحصوں میں پیش آنیوالے واقعات کے تناظر میں ایک اہم پریس کانفرنس سے خطاب کیا- قائد ملت جعفریہ نے صحافیوں کو خوش آمدید کہتے ہو ئے کہا کہ آپ کو یہاں زحمت دینے کا مقصد حالیہ سانحہ راولپنڈی کے المناک واقعہ اور اس کے بعد پیش آنیوالے واقعات کے بارے چند گزارشات آپ کے توسط سے قوم کے سامنے رکھنا چاہتے ہیں۔
حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ ہم سانحہ عاشور راولپنڈی مساجد ،مدارس، امام بارگاہوں،املاک کے نقصان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ اصل مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے لیکن ہم یہ بھی واضح کردینا چاہتے ہیں کہ یوم عاشور پر ہونیوالا واقعہ صرف ایک واقعہ نہیں بلکہ سانحہ تھا جسمیں کئی انسانی جانوں کاضیاع کے ساتھ ساتھ کاروبار اور املاک کا بڑ انقصان ہو ا۔جو اپنے پیچھے بہت سے سوالات چھوڑ گیا ہے سانحہ سے ایک روز قبل جلوس کو روکنے کے لئے سوشل میڈیا (ٹیو ٹر) پر کون سے میسج کس کی طرف سے چلائے گئے؟کیا یہ سانحہ کسی منظم سازش اور منصوبہ بندی کے تحت تورونما نہیں کرایا گیا ؟اس کے پیچھے کون سے عوامل ہیں اور ان کے مقاصد کیا تھے؟ سانحہ کو مذہبی رنگ دیکر قوم سے حقائق چھپانے کی کوشش تو نہیں کی جارہی؟ کس کے ایماء پر اشتعال انگیزی ہوئی ؟پتھراو اور فائرنگ کس نے کی ؟ آناً فاناً مارکیٹ میں آگ کیسے لگی؟ آگ لگانے کے وسائل کہاں سے آئے ؟ انسانی جانوں کا ضیاع کیسے ہوا؟ واقعہ کے بعد مسلح دستوں کو کیوں کنٹرول نہ کیا گیا ؟ ان تمام حالات میں انتظامیہ ، پولیس اور دیگرسیکورٹی اداروں کا کردار کیا رہا ؟ اطلاعات کے باوجود ان متاثرہ مساجد و امام بارگاہوں کے سیکورٹی کے انتظامات کیوں نہ کئے گئے؟
قائد ملت جعفریہ نے مزید کہا کہ یوم عاشور صرف امسال ہی جمعہ کے روز نہیں آیا بلکہ اس سے پہلے بھی کئی مرتبہ یوم عاشورجمعہ کے روز آیا اور اسی روٹ سے جلوس عاشور ہمیشہ پرامن طور پر گزرتا رہا لیکن اس سال انتہائی سنگین سانحہ کیوں پیش آیا ؟ اس کے علاوہ بہت سے سوالات ہیں جن کے صحیح جوابات عوام جاننا چاہتے ہیں جوکہ نہ صرف قابل تشویش ہے۔ اگر حقائق قوم کو نہ بتائے گئے تو اس کے مستقبل قریب میں معاشرے پر مضر اثرات بھی مرتب ہوسکتے ہیں۔اس سانحہ کے بعد ہمارے مطالبے پر جوڈیشل کمیشن کی تشکیل کا قیام احسن اقدام ہے جوڈیشل کمیشن سے ہمیں توقع ہے کہ وہ غیر جانبداری سے حقائق کو عوام کے سامنے منظر عام پرلائیں اور مساجد و امام باگاہ اور ملحقہ املاک کا بھی دورہ کرکے نقصانات،حقائق اور واقعات کا جائزہ لے کر انصاف کے تقاضوں کو پوراکریں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارا اول دن سے اتحاد و یگانگت کا درس رہا ہے اور اس ملک میں ہم اتحاد امت کے بانیان اور داعی ہیں اتحاد و وحدت کے ہر قومی پلیٹ فارم پر ہم نے بھرپور کردار ادا کیا ہے جبکہ محرم الحرام میں بھی انتظامیہ کے ساتھ ہمیشہ بھرپور معاونت کی۔اس سے قبل بھی اس طرح کے واقعات رونما ہوئے جن پر نہ تو کوئی کمیشن بنایا گیا اور نہ ہی آج تک کوئی اقدامات کئے گئے۔ کوئٹہ میں ہزارہ برادری کو ٹارگٹ کیا گیا، ایک روز میں 100 سے زائد افراد کو شہید کردیا گیا، کراچی میں عباس ٹاؤن کا سانحہ سب کے سامنے ہے، پشاو ر میں قصہ خوانی بازار سانحہ، سانحہ چلاس ، سانحہ ہزار گنجی سمیت متعدد ایسے سانحات ہیں جن میں ملت تشیع کو خاص طور پر ٹارگٹ کا نشانہ بنایا گیا مگر اس کے رد عمل میں ہم نے انتہائی صبر کا مظاہرہ کیا، بسوں سے اتار کر لوگوں کو شناخت کرکے ٹارگٹ کیا گیا، زیارات پر جانیوالے بے یارومددگار لوگوں کو ٹارگٹ کرکے بموں سے اڑا دیا گیا مگر ہم نے صبر و تحمل کا مظاہرہ کیا اور قانون کی عملداری یقینی بنانے کا مطالبہ کیا۔ مگر ان معاملات پر کوئی کمیشن قائم کیا گیا نہ ، انکوائری کمیٹی تشکیل دی گئی ۔ یوم عاشورہونیوالے سانحہ کے بعد راولپنڈی میں 7امام بارگاہوں کو نشانہ بنایاگیا امام بارگاہوں کے متولیوں کے گھروں کو نشانہ بنا کر سامان تک لوٹ لیا گیا، قرآن پاک کو شہید کردیا گیا ہے اس جانب کیوں توجہ نہیں دی جارہی ہے اور کیوں مجرمانہ غفلت وخاموشی کا مظاہرہ کیا جارہاہے۔
اسلامی تحریک پاکستان کے سربراہ کہا کہ امن وامان کے حوالے سے پاکستان کے حاالات ناگفتہ بہ ہیں دہشت گردی عرو ج پر ہے اتنے عرصہ سے دہشت گردوں پر کوئی آ ہنی ہاتھ نہیں ڈالا گیا یہ لو گ اصل میں پاکستان کے دشمن ہیں اس ملک میں فرقہ واریت نہیں بلکہ دہشت گردی ہے اور یہ دہشت گرد ہر مسلک کے دشمن ہیں اور پھر جس ملک میں جرم کے بعد سزا کا عمل نہ ہو جس ملک کی جیلیں محفوظ نہ ہوں ،جس ملک میں قرآنی قانون قصاص کو معطل کرکے رکھا جائے تو اس ملک میں امن قائم کیسے ہوگا؟۔ہم یہ سمجھتے ہیں کہ قرآنی قانون کو پس پشت ڈال کر اس ملک میں دہشت گردوں کی حوصلہ افزائی کی گئی ہے لیکن ہم نے آج تک ملک میں ہونے والی دہشت گردی کے حوالے سے کسی مسلک کے اوپر الزام نہیں لگایا ۔یہ دہشت گرد امت مسلمہ کے دشمن ہیں ۔ ہمارے نزدیک تمام مذاہب ، مسالک اور مکاتب کے مقدسات ، مساجد ، مدارس ، امام بارگاہیں ، جلوس ہائے عزادار امام حسین علیہ السلام ،عوام کی جان و مال وا ملاک محتر م ہیں ۔اُن کا احترام اور حفاظت ہر شہری کی ذمہ داری ہے ۔عوام سے بھر پور مطالبہ کرتے ہیں کی باہمی اتحاد واتفاق ،رواداری ، صبر،حو صلہ ،تحمل و برداشت اور بھائی چارے کی فضا کو برقرار رکھیں ہم سمجھتے ہیں کہ یہ سانحہ ملکی وحدت کو پارا پارا کرنے کی گھناؤنی سازش ہے تاکہ اس ملک میں فرقہ واریت کی آگ کو بھڑکا کر ملک دشمن عناصر اپنی مذموم کارروائیوں میں کامیاب ہوں مگر ہم اس سازش کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے،تمام مسالک کے جمیع علماء کرام فرقہ واریت کی سازش کو ناکام بنانے کے لئے کردار ادا کریں۔
قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ آ خر میں عوام کے لئے ہمارا پیغام ہے کہ عزاداری سید الشہداء ہمارا آئینی حق ہے ہماری شہری آزادیوں اور بنیادانسانی حقوق کا مسئلہ ہے ۔ ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں ، عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں کیونکہ عزاداری ظلم کے خلاف احتجاج اور مظلوم کی حمایت کی تحریک ہے ۔