• مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے علمی حلقوں میں خلاء پیدا ہوا علامہ شبیر حسن میثمی
  • مسئول شعبہ خدمت زائرین ناصر انقلابی کا دورہ پاکستان
  • علامہ عارف واحدی کا سید وزارت حسین نقوی اور شہید انور علی آخوندزادہ کو خراجِ تحسین / دونوں عظیم شخصیات قومی سرمایہ تھیں
  • علامہ شبیر میثمی کی وفد کے ہمراہ علامہ افتخار نقوی سے ملاقات
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے وفد کی مفتی رفیع عثمانی کے فرزند سے والد کی تعزیت
  • سید ذیشان حیدر بخاری متحدہ طلباء محاذ کے مرکزی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے ۔
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کے اعلی سطحی وفد کی پرنسپل سیکرٹری وزیر اعظم پاکستان سے تعزیت
  • شیعہ علماء کونسل پاکستان کی نواب شاہ میں پریس کانفرنس
  • اپنے تنظیمی نظام اور سسٹم کو مضبوط سے مضبوط کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ ورکر کنونشن
  • مفتی رفیع عثمانی کی وفات علمی حلقوں میں خلا مشکل سے پُر ہوگا علامہ شبیر میثمی

تازه خبریں

ہمارے نوجوانوں کو مکتب تشیع کے سفیر بن کرملی شعورکا حامل کردارادا کرنا ہوگا، آخونزادہ مجاہد علی

جعفریہ پریس –  شیعہ علماء کونسل پاکستان ضلع پشاور کے صدر آخونزادہ مجاہد علی نے کہا ہے کہ ملی بیداری کیلئے ہم سب کو مل کر کام کرنا ہوگا۔ نوجوانوں میں دینی و ملی شعور کی اہمیت کو اجاگر کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے اور اس کیلئے محافل دروس کا انعقاد افادیت کا حامل ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے شیعہ علماء کونسل خیبر پختونخوا کے صوبائی سیکرٹریٹ، پشاور میں ہونیوالے تنظیمی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں ضلعی کابینہ کے عہدیداران، یونٹ صدور و سیکرٹریز واراکین مشاورت نے شرکت کی۔ جن میں مرکزی جنرل کونسل کے رکن عمران حسنین انصاری، صوبائی جنرل کونسل کے رکن پروفیسر ملازم حسین، مولانا ذوالفقارعلی عزیزی، سینئر نائب صدر سید مہر علی شاہ، نائب صدر رضوان حسنین، سیکرٹری اطلاعات مظہرعلی ممتاز آخونزادہ، سیکرٹری مالیات احمد علی، رابطہ سیکرٹری نوروز علی میر، یونٹ صدور محمد عباس کربلائی، سید مرتضی شاہ جعفری، حبدار حسین، افتخار علی میر، سید مہدی عباس، سردار عسکر حیدر، سجاد علی بٹ، یونٹ سیکرٹریز سید تیمور شاہ کاظمی، حب علی میر، غلام فاروق، شہزاد عباس، ذیشان حیدر، قاضی یاسر، غلام عباس، حسنین علی، سید سجاد علی شاہ جعفری اور حیدر عباد علیو دیگر شامل تھے۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے آخونزادہ مجاہد علی اکبر نے کہا کہ ہمارے نوجوانوں کو مکتب تشیع کے سفیر بن کر ملی شعور کا حامل کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ جماعتیں نظریات و عقائد کی محافظ ہوتیں ہیں اور ان میں شامل افراد اپنی ملت کو مشکل سے مشکل حالات میں بھی اپنے تدبر اور حکمت سے نکال کر ملت کیلئے ہمیشہ امید کی کرن ثابت ہوتے ہیں، لہذا ضروری ہے کہ قوم کیلئے کچھ کر گزرنے کی نیت سے اپنی صف بندی کی جائے اور روحانی، فکری، اور عملی طور پر اپنی قوم کی آسودگی اور درپیش حالات کیلئے حکمت عملی طے کی جائے۔