کراچی(اسٹاف رپورٹر)شیعہ علماء کو نسل پاکستان صوبہ سندھ کراچی ڈویزن کی جانب سے سا نحہ سہون شر یف اور ملک بھر میں جاری دہشت گردی کہ خلاف سندھ بھر میں احتجاجی ریلیاں ،مظاہرے اور تعزیتی اجتماعات منعقد ہوئے کراچی میں مر کزی احتجاجی ریلی خراسان سے امام بارگاہ علی رضا تک نکالی گی جس میں ذمہ داران اور کارکنان کی بڑی تعداد مو جود تھی ریلی کے شر کا ء سے خطاب میں علامہ ناظر عباس تقوی، علامہ شبیر حسن میثمی،علامہ جعفر سبحانی اور علامہ کرم الدین واعظی کا کہنا تھا کہ پورے ملک میں دہشت گردوں نے ملک کی فضاء کو سو گ وار کر کے رکھ دیا ہے سا نحہ سہون شر یف میں پیش آنے والا یہ واقعہ سندھ کی تا ریخ میں دہشت گردی کا بد ترین واقعہ ہے بے گناہ انسانیت کو قتل والے اسلام اور مسلمانوں کے خیر خواہ نہیں ہو سکتے اب دہشت گردو کا قلعہ قمع کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے یہ سفاک دہشت گرد کسی بھی معا فی کہ مستحق نہیں اس ملک میں دہشت گردو کہ مکمل خا تمے تک امن ممکن نہیں ہو سکتادہشت گردو نے مزار پر حملہ کر کے بزدلی کا ثبوت دیا ہے اس واقعے میں ملوث افراد کا سراغ لگا کر واقعے میں ملوث درندہ صفت افراد اوراُن کے سہولت کارو کو قانون کی گرفت میں لا کر قرار واقعی سزا دی جائے اگر ریا ستی اداروں نے ملک بھر کے مختلف حصوں میں ہو نے والی دہشت گردی اور ٹا رگٹ کلنگ کے واقعات میں ملوث افراد کو تکتہ دار پر لٹکا یا ہو تا اور پس پردہ محر کات و حقا ئق عوام کے سا منے لائے جاتے تو آج جو ملک کی صورتحال ہے وہ نہ ہو تی اس سا نحہ میں دہشت گردو کی منظم کاروائی نے سیکیورٹی فورسز کے اداروں کی پول کھول دی درگاہ سہون شریف کا افسوس ناک واقعہ اپنے ساتھ بہت سارے سوال چھوڑ گیا اگر حکومت جلد از جلد امدادی سہولیات فراہم کرتی تو اس واقعے میں اتنی زیادہ قیمتی جانیں ضائع نہیں ہوتی گز شتہ کئی سا لوں سے پا کستان دہشت گردی کی آگ میں جل رہا ہے اور آج تک کئی ہزار بے گناہ اس دہشت گردی کا نشانہ بن چُکے ہیں لیکن حکومت اور ریاستی ادارے تا حال اس دہشت گردی کو رو کنے میں ناکام نظر آتے ہیں اور دہشت گرد وقفے وقفے سے اپنے ہدف کو نشانہ بنا نے میں کامیاب ہو جاتے ہیں دہشت گرد مقدس مقامات کو مسلسل نشانہ بنا رہے ہیں جوتشویش ناک بات ہے اس طرح کے واقعات آپر یشن ضرب عضب اور قومی ایکشن پلان پر کئی سوالات اُٹھاتے ہیں کہ اتنے وسیع آپر یشن کے با وجود دہشت گردو کی کاروائی افسوس ناک عمل ہے عوام کو دہشت گردو کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے کب تک عوام اپنے پیاروں کے جنا زے اٹھاتے رہیں گے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے ریاست پا کستان کے پاس کوئی جامع پالیسی موجود نہیں ہے سا نحہ سہون میں شہیدہونے والے شہداء کے اعضاء کی بے حر متی شرم ناک عمل ہے جو حکومت کی بے حسی کا مُنہ بو لتا ثبوت ہے شہداء کی باقیات کو کچڑا کنڈی میں ڈالنا انسانیت کی توہین ہے ایسے اقدام کرنے والوں کے خلاف سخت سے سخت کاروائی کی جائے ہم حکومت سے مطالبہ کر تے ہیں کہ اس واقعے میں شہید ہونے والے زیادہ تر خاندان غر یب خاندانوں سے تعلق رکھتے ہیں لہذا حکومت اس واقعے میں شہید ہونے والے افراد کو 20لاکھ اور زخمی کو10لاکھ معاوضہ فراہم کریں اور پورے ملک میں دہشت گردوں کے خلاف بھر پور اور فیصلہ کُن کاروائی شروع کرے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here